کراچی(سی این این)کراچی میں چینی قونصلیٹ پر حملہ کرنے والے تینوں دہشتگردوں کی شناخت ہو گئی ،پولیس کی فائرنگ سے مارے جانے والے دہشت گردوں کی شناخت  عبدالرازق، ازل خان مری عرف سنگت دادا اور رئیس بلوچ کے نام سے ہوئی ہے جبکہ دہشت گردوں کے سہولت کار تک رسائی میں سندھ پولیس نے اہم شواہد حاصل کرلئے،آئندہ چوبیس گھنٹوں میں اہم پیشرفت کا امکان ہے،دہشت گرد عبدالرزاق کے اہل خانہ کا کہنا ہے کہ انہوں نے 2014 میں اسے مشکوک سرگرمیوں کی وجہ سے عاق کر دیا تھا ۔کراچی میں چینی قونصلیٹ میں دہشت گردی  کے  سنگین واقعہ میں ملوث حملہ آوروں کی شناخت ہو گئی ہے ،حملے کے ماسٹر مائنڈ اور بی ایل اے کے کمانڈر اسلم عرف اچھو کے اس وقت بھارت میں موجود ہونے کا انکشاف ہوا ہے ۔حملے میں مارے گئے دہشت گردوں میں سے خاران کے رہائشی عبد الرزاق ، ازل خان مری عرف سنگت دادا اور رئیس بلوچ کے نام سے ہوئی ہے۔تفتیش کاروں نے دہشت گردوں کی شناخت کے بعد تفتیش کا دائرہ وسیع کر دیا ہے ۔دوسری طرف مارے جانے والے دہشت گرد عبد الرزاق کو اس کے گھر والوں نے پہچان لیا ہے اور کہا ہے کہ نافرمانی کے باعث انہوں نے 13 اگست 2014کو کوئٹہ کے مقامی اخبار میں اسے عاق کرنے کا اشتہار بھی دیا تھا اور اس سے مکمل لاتعلقی اختیار کرتے ہوئے اسے گھر سے نکال دیا تھا ۔دہشت گرد عبد الرزاق کے اہل خانہ کا کہنا ہے کہ انہوں نے عبد الرزاق کی مشکوک سرگرمیوں کی وجہ سے اسے عاق کیا تھا،اس کی وجہ سے گھر والے مشکلات کا شکار ہو رہے تھے اور اسی وجہ سے عبد الرزاق کو عاق کیا تھا ، عاق کرنے کے بعد سے ان کا دہشت گرد عبد الرزاق سے کوئی رابطہ نہیں تھا ۔دوسری طرف سیکیورٹی اداروں نے چینی قونصلیٹ پر ہونے والے حملے کی ابتدائی رپورٹ وزیراعلیٰ سندھ کو پیش کر دی ہے،ابتدائی رپورٹ کے مطابق ہلاک دہشت گرد عبدالرازق بلوچستان حکومت کا ملازم اور خاران کا رہائشی نکلا۔حملہ آوروں کی شناخت کے بعد سندھ حکومت نے بلوچستان حکومت سے رابطے کا فیصلہ کیا ہے جس میں دہشت گردوں سے متعلوق معلومات شیئر کی جائیں گی۔سیکیورٹی اداروں نے دہشت گردوں کے زیر استعمال گاڑی کے مبینہ مالک حیدر سمیت تین افراد کو حراست میں لیا گیا ہے۔حیدر کے مطابق گاڑی دو ہزار سولہ میں شو روم پر فروخت کی تھی، گاڑی چوری ہوئی یا چھینی گئی؟ریکارڈ موصول نہیں ہوا۔