اسلام آباد(سی این این)سابق وزیراعظم نوازشریف نے کہا ہے کہ چیئرمین نیب سے متعلق وزیراعظم کی پارلیمنٹ میں گفتگو خوش آئند ہے،ملک کوعجیب تماشابنایا جارہا ہے،نیب بہت سے معاملات پراختیارات سے تجاوزکررہاہے، آمر کا بنایا ہوا قانون ختم ہونا چاہئے تھا۔احتساب عدالت میں سابق وزیراعظم نوازشریف نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب ہاو¿س میں آج ہنگامی پریس کانفرنس کی جائے گی، پریس کانفرنس میں منی لانڈرنگ کے حالیہ الزامات پربات ہوگی،انہوں نے کہا کہ مشرف نے اپنے عزائم کی تکمیل کےلئے قانون بنایا،اب فیصلے کاوقت ہے ملک میں جمہوری حکومتوں کے قانون چلیں گے یاآمروں کے،انہوں نے کہا کہ جتنی جلدی اس قانون کوختم کردیں ملک کیلئے بہترہوگا،ترقیاتی کاموں میں اتنامصروف رہے کہ اس طرف دھیان نہیں گیا،نوازشریف کا کہناتھا کہ ڈکٹیٹرشپ کے قوانین کوختم کرنے سے متعلق جلدفیصلہ کرناہوگا،قومی احتساب بیورو ایکٹ ڈکٹیٹرکاقانون ہے۔گوجرانوالہ سے رانانذیر کی تحریک انصاف میں شمولیت پر نواز شریف نے رد عمل دیتے ہوئے کہا کہ میں نے بھی سنا ہے کہ رانا نذیر تحریک انصاف میں جا رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ رانانذیر کے بیٹے نے پارٹی صدارت کےلئے مجھے ووٹ نہیں دیا تھا،سابق وزیراعظم نے کہا کہ سوشل میڈیاپرچل رہا ہے ٹائٹینک ڈوبنے کی وجہ سامنے آ گئی اور ٹائٹینک ڈوبنے پرنواز شریف کونوٹس کاامکان ہے، عمران خان کی بریت سے متعلق سوال انہوں نے کہا کہ عمران خان کی کسی بات پر اعتبار نہیں کیا جا سکتا،وہ سیاستدان ہی کیا جس کی بات پر اعتبار نہ کیا جائے،ان کا کہناتھا کہ نیب کی طرف سے کوئی چیز سامنے آنی ہوتی توپہلے10روزمیں آجاتی۔